Tuesday , June 19 2018
Home / Samaa Urdu News / فاٹا کا خیبر پختونخوا میں انضمام، بل آج سینیٹ میں پیش کیا جائیگا

فاٹا کا خیبر پختونخوا میں انضمام، بل آج سینیٹ میں پیش کیا جائیگا

فاٹا کا خیبرپختونخوا سے انضام کا بل قومی اسمبلی سے پاس ہونے کے بعد آج سینیٹ میں پیش کیا جائے گا۔

دوسری جانب فاٹا انضمام اور اصلاحات کی منظوری کیلئے خیبر پختونخوا اسمبلی کا اجلاس 27 مئی کو بلانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ حکومت کی جانب سے اجلاس بلانے کی ریکوزیشن گورنر کے پی کو ارسال کردی گئی ہے،اس موقع پر تمام اراکین کی حاضری یقینی بنانے کیلئے اراکین کو نوٹسز بھیجوا دیئے گئے ہیں۔

 

اس سے قبل جمعرات کے روز قومی اسمبلی کا اجلاس اسپیکر سردار ایاز صادق کی سربراہی میں شروع ہوا۔ اس موقع پر حکومت اور دیگر سیاسی جماعتوں کے تعاون سے فاٹا کا کے پی میں انضمام کا بل فلور پر پیش کیا گیا، جہاں قومی اسمبلی میں فاٹا کی خیبر پختونخوا میں ضم کرنے سے متعلق 31 ویں آئینی ترمیم کا بل دو تہائی سے زائد اکثریت سے منظور کیا گیا، جہاں بل کے حق میں 229 ، جب کہ مخالفت میں صرف ایک ووٹ آیا۔

بل کے مطابق آئندہ پانچ سال تک فاٹا میں قومی اسمبلی کی 12 اور سینیٹ میں 8 نشستیں برقرار رہیں گی۔ آئندہ برس فاٹا کے لیے مختص صوبائی نشستوں پر انتخابات ہوں گے۔ فاٹا میں صوبائی قوانین کا فوری اطلاق ہو گا اور منتخب حکومت قوانین پر عمل درآمد کے حوالے سے فیصلہ کرے گی۔ بل میں سپریم کورٹ اور پشاور ہائی کورٹ کا دائرہ کار فاٹا تک بڑھانے اور ایف سی آر کے مکمل خاتمہ شامل ہے۔

 

بل کی شق وار منظوری کے عمل کے آغاز میں توقع کے عین مطابق جے یو آئی (ف) اور پشتونخوا ملی عوامی پارٹی نے بل کی مخالفت کرتے ہوئے ایوان سے واک آؤٹ کیا۔ شق وار منظوری کے بعد ترمیمی بل کی حتمی منظوری کا عمل شروع ہوا اور ارکان اسمبلی نے فرداً فرداً مسودے پر دستخط کیے۔

 

فاٹا کے خیبر پختونخوا میں انضمام کے بل کی اہمیت کے پیشِ نظر تحریکِ انصاف کے چیئرمین عمران خان بھی کئی عرصے بعد ایوان میں نظر آئے۔

اس موقع پر خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ یہ تاریخی بل ہے، پوری قوم کی نظریں اس پر ہیں، فاٹا کے لوگوں کو وہی حقوق ملیں گے جو باقی پاکستانیوں کو ملے ہیں، ہم تو ایک گھنٹہ انتظار کرنے کو تیار ہیں، وزرا کھڑے ہو جائیں دیکھیں کیا صرف دو کم ہیں۔

شامل ہونے والے علاقے

واضح رہے کہ بل کی مکمل منظوری کے بعد خیبر پختونخوا کا حصہ بننے والے فاٹا کے علاقوں میں مہمند ایجنسی، باجوڑ ایجنسی، کرم ، شمالی اور جنوبی وزیرستان، خیبر اور اورکزئی ایجنسیوں کے علاوہ ایف آر پشاور، ایف آر بنوں، ایف آر کوہاٹ، ایف آر لکی مروت، ایف آر ڈیرہ اسماعیل خان اور ایف آر ٹانک کے علاقے شامل ہیں۔

خیبر پختونخوا کا حصہ بننے والا ’پاٹا‘ علاقوں میں چترال، دیر، سوات، کوہستان، مالاکنڈ اور مانسہرہ سے منسلک قبائلی علاقہ شامل ہیں۔ بلوچستان کا حصہ بننے والے پاٹا علاقوں میں ضلع ژوب، دکی تحصیل کے علاوہ باقی ضلع لورالائی، ضلع چاغی کی تحصیل دالبندین، ضلع سبی کے مری اور بگتی قبائلی علاقے شامل ہیں۔



Visit To News Source Webpage

Check Also

عید صرف بچوں کی تو نہیں ہوتی؟

عید صرف بچوں کی تو نہیں ہوتی؟ 2۔ عید سے زیادہ خوشی عید کی چھٹیوں …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *